Forum Pakistan
New User? Register | Search | Memberlist | Log in
Forum Pakistan - Pakistani Forums
Pakistani forum to discuss Pakistani Media, Siasat, Politics Talk Shows, Khaber Akhbar, Khel, Cricket, Film, Dramas, Songs, Videos, Shairy, Shayari, Pyar Mohabbat ki Kahani, Tourism, Hotels, Fashion, Property, Naukary Gupshup and more.
Watch TV OnlineLive RadioListen QuranAkhbarFree SMS PakistanResults OnlineUrdu EditorLollywoodLive Cricket Score
Government DepartmentsKSE Live RatesUseful LinksJobsOnline GamesCheck EmailPromote us
GEO News LiveGEO NewsDawn News Live TVExpress News

Masla Meelad islam ki nazar main


Bookmark and Share Goto page 1, 2  Next
 
Reply to topic    Forum Pakistan - Pakistani Forums Home » Islam Forum
Masla Meelad islam ki nazar main
Author Message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Masla Meelad islam ki nazar main
مسئلہ میلاد اسلام کی نظر میں


مسئلہ میلاد اسلام کی نظر میں : زیرنطرکتاب میں جشن میلادنبوی - صلى الله عليه وسلم - کے منانے کے متعلق تاریخی وشرعی بحث کی گئی ہے نیز قائلین میلاد نبوی کی دلیلوں اورکمزورشبہات کا مدلل اورٹھوس جواب دیا گیا ہے اورمفتی عرب سماحۃ الشیخ عبد العزیز بن باز رحمہ اللہ کے متعلق میلاد کے منانے والوں کی تکفیر کے سلسلے میں بی بی سی لندن ریڈیوکے ذریعہ پھیلائے گئے غلط پروپیگنڈہ کا پردہ فاش کیا گیا ہے اور یہ ثابت کیا گیا ہے کہ موصوف رحمہ اللہ عید میلاد منانے والوں کی تبدیع کے قائل تھے نہ کی تکفیرکے. کیونکہ اس عید کا تصورقرون مفضلہ صحابہ وتابعین کے زمانہ میں نہیں تھا یہ تو ساتویں صدی عیسوی میں شیعی بادشاہ ملک مظفرکی ایجاد کردہ بدعت ہے جسےعصرحاضرکے نام نہاد مسلمان انتہائی تزک واحتشام کے ساتہ مناتے نظرآتےہیں نیز یہ عیسائیوں کی عید ولادت مسیح کے مشابہ بھی ہے جسکی شریعت میں ممانعت آئی ہے.


Mon Mar 02, 2009 1:37 am View user's profile Send private message
urfi67
Forum Family Member
Forum Family Member


Joined: 25 Apr 2008
Posts: 8248

Reply with quote
it would be much better if we develop tolerance for all sects of Islam and instead of criticising each other , we should focus on the enemies of Islam
Mon Mar 02, 2009 9:30 pm View user's profile Send private message
an_honest
Full PK Member
Full PK Member


Joined: 26 Nov 2008
Posts: 163
Location: lahore

Reply with quote
hmm right but sath sath unn cheezon per bhi nazer rakhni chaheye jinko ham islam ka hissa samjhtey hein lekin haqiqat mein wo islam ka hissa nahi hein,jinka wajood na Nabi e kareem(sallAllaho alyhe wasallam ) k daur mein tha,na sahaba e karam(radhiALLAHo anhum)k duar mein ,na taba'een k daur mein na taba taba'een k daur mein..lekin phir bhi ham unhein islam samjhtey hein...we should be carefull k kahin ham bid'aat ka shikar to nahi ho rahey....kun k her bidat gumrahi ki taraf ley jati hai...................anyways no offence..

_________________
SUPER POWER SIRF ALLAH
LA ILAHA ILLALLAH

Mon Mar 02, 2009 10:10 pm View user's profile Send private message
urfi67
Forum Family Member
Forum Family Member


Joined: 25 Apr 2008
Posts: 8248

Reply with quote
an_honest wrote:
hmm right but sath sath unn cheezon per bhi nazer rakhni chaheye jinko ham islam ka hissa samjhtey hein lekin haqiqat mein wo islam ka hissa nahi hein,jinka wajood na Nabi e kareem(sallAllaho alyhe wasallam ) k daur mein tha,na sahaba e karam(radhiALLAHo anhum)k duar mein ,na taba'een k daur mein na taba taba'een k daur mein..lekin phir bhi ham unhein islam samjhtey hein...we should be carefull k kahin ham bid'aat ka shikar to nahi ho rahey....kun k her bidat gumrahi ki taraf ley jati hai...................anyways no offence..
fully agreed with u,,,but the point is that among The Muslims we need to promote a culture of tolerance and should try to educate all about Islam without offending other ppls
Mon Mar 02, 2009 10:16 pm View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
AOA

Dear All

thnx for ur comments

purpose of this book is just to educate muslim - understand islam better .......

thnx for ur comments an honest bhai

sar285@gmail.com
Mon Mar 02, 2009 10:55 pm View user's profile Send private message
an_honest
Full PK Member
Full PK Member


Joined: 26 Nov 2008
Posts: 163
Location: lahore

.. Reply with quote
honest bhai nahi honest sis

_________________
SUPER POWER SIRF ALLAH
LA ILAHA ILLALLAH

Tue Mar 03, 2009 3:09 pm View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
oks honest sis

have u seen my post salam to all forum members ..
Wed Mar 04, 2009 7:41 pm View user's profile Send private message
an_honest
Full PK Member
Full PK Member


Joined: 26 Nov 2008
Posts: 163
Location: lahore

.. Reply with quote
yes I hav .

_________________
SUPER POWER SIRF ALLAH
LA ILAHA ILLALLAH

Wed Mar 04, 2009 9:34 pm View user's profile Send private message
innocentguy
Pak Newbie


Joined: 07 Mar 2009
Posts: 1

melad ka Jaloos nikalna? Reply with quote
kayi loog kehtay hain kay jaloos nikalna mana hai?
but i think kay har mulk ke sakafat mukhtalif hoti hai or jaloos nikalna pakistan ke sakafat hai..
jabke arab walay jaloos nahi nikaltay..or pakistan main agar ihtijaj ho to jaloos koi khusi ka izhar ho to jaloos
ke shakal main hi hota hai..tu Sarwar e Kayenat(sallalaho alyehe wasullam) ki wiladat ka jaloos kyon nahi nikala ja sakta..
Sat Mar 07, 2009 6:43 am View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
Here are some links


مسئلہ میلاد اسلام کی نظر میں : زیرنطرکتاب میں جشن میلادنبوی - صلى الله عليه وسلم - کے منانے کے متعلق تاریخی وشرعی بحث کی گئی ہے نیز قائلین میلاد نبوی کی دلیلوں اورکمزورشبہات کا مدلل اورٹھوس جواب دیا گیا ہے اورمفتی عرب سماحۃ الشیخ عبد العزیز بن باز رحمہ اللہ کے متعلق میلاد کے منانے والوں کی تکفیر کے سلسلے میں بی بی سی لندن ریڈیوکے ذریعہ پھیلائے گئے غلط پروپیگنڈہ کا پردہ فاش کیا گیا ہے اور یہ ثابت کیا گیا ہے کہ موصوف رحمہ اللہ عید میلاد منانے والوں کی تبدیع کے قائل تھے نہ کی تکفیرکے. کیونکہ اس عید کا تصورقرون مفضلہ صحابہ وتابعین کے زمانہ میں نہیں تھا یہ تو ساتویں صدی عیسوی میں شیعی بادشاہ ملک مظفرکی ایجاد کردہ بدعت ہے جسےعصرحاضرکے نام نہاد مسلمان انتہائی تزک واحتشام کے ساتہ مناتے نظرآتےہیں نیز یہ عیسائیوں کی عید ولادت مسیح کے مشابہ بھی ہے جسکی شریعت میں ممانعت آئی ہے.


Code:
http://www.islamhouse.com/d/files/ur/ih_books/ur_Equity_Said_in_the_Prophet_Mawlid_from_Ecessive_and_Injustice.pdf


عیدمیلاد النبی صلى اللہ علیہ وسلم منانا کیسا ہے؟کیا یہ سلف صالحین سے ثابت ہے یا قرون مفضلہ کے بعد میں فاطمی شیعوں کی ایجاد کردہ بدعت ہے؟ قائلین عید میلاد النبی کے شبہات اورانکا رد ان سب کی جانکاری حاصل کریں مقالہ مذکورمیں.


Code:
http://www.islamhouse.com/d/files/ur/ih_articles/single/ur_innovation_in_religion_and_celebrating_the_prophetic_birthday.pdf



1-كياعید میلاد پرکی جانے والی خوشیاں ولادت پرہیں یا وفات پر؟
2-مروجہ میلادالنبی صلى اللہ علیہ وسلم کی شرعی حیثیت کتاب وسنت كی روشنی میں،صحابہ رضی اللہ عنہم تابعین وتبع تابعین اورائمہ اربعہ کی نظر میں.
3-قائلین عید میلاد النبی صلى اللہ علیہ وسلم کے دلائل اورانکا جائزہ ان سب کے بارے میں تفصیلی معلومات حاصل کیجئےزیرنظر کتاب کامطالعہ کرکے جومیلادالنبی کے موضوع پرنہایت ہی جامع ومانع سمجھی جاتی ہے.ضرورپڑھیں.



Code:
http://www.islamhouse.com/d/files/ur/ih_books/single/ur_sahi_tareekh_waladate_mustaf.pdf



عید میلاد النبی کی بدعت

Code:
http://www.islamhouse.com/d/files/ur/ih_sounds/single/ur6967.rm


Moderator: Please always use links within [code] tag.
Sun Mar 08, 2009 4:45 am View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
sorry

inshallah from next time ...
Wed Mar 11, 2009 8:59 am View user's profile Send private message
CoolMind
Senior Member Pakistani
Senior Member Pakistani


Joined: 14 Jun 2008
Posts: 885

Reply with quote
jazak allah

_________________
Wed Mar 11, 2009 9:52 am View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
Oh cool mind pa g how r u

and kithay hegay see tussy anay dinna to?
Wed Mar 11, 2009 1:17 pm View user's profile Send private message
mfaisalgt1
Pak Newbie


Joined: 12 Nov 2008
Posts: 28

Thanks Reply with quote
Thanks.
Wed Mar 11, 2009 11:28 pm View user's profile Send private message
CoolMind
Senior Member Pakistani
Senior Member Pakistani


Joined: 14 Jun 2008
Posts: 885

Reply with quote
tum sunao g me yahi hoon jani bas thori masroofiat chal rahi hai. kesi chal rahi hai life

_________________
Thu Mar 12, 2009 11:56 am View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
ALHAMDULILLAH theek thaak

aj kal berozgar dot com huey huey hain so searching for job and also preparing for remaining papers of CA

ap sunao woh walay forum ki to aisee ki taisee ho gayee hai


yeh hum naheen

waqi hum kanjar thora hi hain Wink hehhe
Thu Mar 12, 2009 8:35 pm View user's profile Send private message
aamirmemon
Pak Newbie


Joined: 12 Mar 2009
Posts: 3

Reply with quote
[size=24][size=18]i think people should get educate its sunnat to do meelaad shareef and juloos as well plss read attacchment its proven by sahi hadees please read from top to bottom
عاشقوں کی عید

از: علامہ محمد اکمل عطاری قادری مدظلہ العالی


بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

اس مدنی رسالے میں دعوت اسلامی کے مروجہ طریقے کے عین مطابق عید میلاد النبی صلی اللہ علیہ وسلم منانے کا عقلی و نقلی دلائل کے ساتھ دلچسپ انداز میں ثبوت پیش کیا گیا ہے۔


عاشقو ! خوشیاں مناؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

عاشقو ! خوشیاں مناؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم
راستہ دل کو بناؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

آرہے ہیں باعث تخلیق عالم مومنو !
پلکیں راہوں میں بچھاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

سنّت رَبُ العُلٰی ہے جشن میلاد النبی
چپّے چپّے کو سجاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

نعمتیں کونین کی ہیں جس کا صدقہ بالیقیں
اس نبی کے گیت گاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

لینے آغوش کرم میں رَب کی رحمت چھا گئی
عاصیو! اب جھوم جاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

یاد آقا میں بہا کر دل سے اشک بے بہا
نار ، دوزخ کی بجھاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

خوش دلی سے خرچ کر کے مال و دولت چاہ میں
اپنی قسمت کو جگاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم

محفلیں ذکر نبی کی جا بجا کر کے عطا
رابطہ حق سے ملاؤ آمد محبوب ہے
صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم ۔

( علامہ محمد اکمل عطار قادری عطاری )



پہلے اسے پڑھئے !

پیارے اسلامی بھائیو !

عقل مند سائل یقیناً اسے ہی کہا جائے گا کہ جو سخی کا دریائے کرم جوش میں دیکھ کر دست سوال دراز کرنے میں دیر نہ کرے ، کیونکہ ایسے موقع پر کریم کی بارگاہ سے ان انعامات کی بارش ہوتی ہے کہ جن کا عام حالات میں انسان تصور بھی نہیں کر سکتا ۔

عاشقوں کی عید یعنی عید میلاد النبی صلی اللہ تعالٰٰی علیہ وآلہ وسلم بھی ایسا ہی با برکت اور پر نور موقع ہے ، کہ جس کی آمد کی بناء پر تمام سخیوں کو سخاوت کی خیرات تقسیم فرمانے والے ربِ سرکار عزوجل و صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کا دریائے سخاوت انتہائی جوش پر ہوتا ہے ، پس عقل مند و موقع شناس طالب کرم کو چاہئیے کہ جشن ولادت کا اہتمام کرنے کے ذریعے ‘‘ اللہ تعالٰی کی بارگاہ میں دست سوال دراز کرنے اور بارگاہ الہٰی عزوجل سے دنیوی اور اخروی نعمتوں اور حتمی فلاح و کامرانی کا مستحق بننے میں دیر نہ کرے اور اس سعادت عظمٰی کے حصول میں رکاوٹ بننے والے شیطانی وسوسوں کو دل میں جگہ بھی نہ دے کیونکہ جہاں اس مبارک ترین موقع پر اللہ تعالٰی کی رحمت کرم نوازی کے بہانے تلاش کر رہی ہوتی ہے وہیں شیطان بھی اپنے ‘‘ رفقاء‘‘ سمیت ، امّت سرکار صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کو اس نعمت سے مکمل طور پر فیض یاب ہونے سے محروم و نامراد کرنے کیلئے مصروف عمل ہوتا ہے۔

الحمدللہ! “ سگ عطار “ نے بھی دلچسپ انداز میں بزرگان دین کی اتباع میں، اللہ تعالٰی کی رحمت کے حصول اور بارگاہ رسالت صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم میں سرخروئی، امید شفاعت اور سادہ لوح اسلامی بھائیوں اور بہنوں کو شیطانی دسترس سے محفوظ رکھنے کیلئے چند سطریں تحریر کرنے کی سعادت حاصل کی ہے امید واثق ہے کہ اس انداز دلچسپ کو نگاہ پسندیدگی سے دیکھا جائے گا “ اس رسالے کی تکمیل صرف بزرگوں کا فیض ہے، ہاں اس میں موجود اغلاط سگ عطار کا کارنامہ ہے۔“

اس رسالے میں موجود کرادر ایک اعتبار سے حقیقت اور ایک حیثیت سے فرضی ہیں، بہرحال مقصود کا حاصل ہو جانا دونوں صورتوں میں سے کسی کو بھی تسلیم کرلینے پر، اللہ تعالٰی کی عطا سے متوقع ہے اس رسالے میں بارھویں شریف کے متعلق وسوسوں کا نہ صرف جواب دیا گیا بلکہ عید میلادالنبی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم منانے کا طریقہ، اس کی فضیلت، رحمت عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کے فضائل و کمالات و معجزات اور آپ کی ولادت و رضاعت کے واقعات کو بھی مستند کتب تاریخ سے نقل کرنے کا شرف حاصل کیا گیا ہے۔

اللہ تعالٰی سے دعا ہے کہ وہ اس کوشش مختصر کو اپنی بارگاہ بےکس پناہ میں قبول و منظور فرمائے اور اسے امیر اہلسنت امیر دعوت اسلامی حضرت علامہ مولانا ابوالبلال محمد الیاس عطار قادری رضوی دامت برکاتہم العالیہ اور قبلہ سید عبدالقادر “ باپو شریف “ مدظلہ العالی سمیت تمام اہلسنت اور مشائخ عظام رضی اللہ تعالٰی عنہم کیلئے خصوصاً اور عوام اہلسنت کیلئے عموماً بلندیء درجات کا سبب بنائے۔

آمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم
(ترجمہ): اے اللہ عزوجل قبول فرما لے ( یہ دعا ) امانت دار نبی کی عظمت اور بزرگی کے وسیلے سے ان پر اللہ تعالٰی، رحمت اور سلامی نازل فرمائے)

طالب مدینہ و بقیع و مغفرت
محمد اکمل عطار قادری عطاری
3 صفرالمظفر 1420ھ

ایک نوجوان نماز فجر باجماعت ادا کرنے کے بعد سر جھکائے، نگاہیں نیچی کئے، انتہائی عقیدت و محبت کے ساتھ اپنے محسن اعظم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں درود و سلام کے نذرانے پیش کرتا ہوا، چھوٹے چھوٹے قدم اٹھاتا ہوا، مسجد سے گھر کی جانب رواں دواں تھا، ایک دینی ماحول سے وابستگی سے اللہ تعالٰی کی رحمت نے اسے مکمل طور پر اپنی آغوش میں لیا ہوا تھا، چنانچہ اس کے سر پر عمامہ شریف اور زلفیں، چہرے پر داڑھی شریف، بدن پر سفید لباس، سینے پر بائیں جانب جیب میں نمایاں طور پر مسواک شریف اور چہرے پر “ عبادت پر استقامت اور گناہوں سے مکمل طور پر پرہیز کی برکت سے “ نورانیت کی جلوہ گری تھی۔ اس سنتوں کے چلتے پھرتے نمونے پر نظر پڑتے ہی جاں نثاران مصطفٰی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم یعنی صحابہءکرام علیہم الرضوان کی “ اتباع سنت میں دیوانگی کی یاد “ تازہ ہو رہی تھی جب یہ متقی و باعمل نوجوان ایک باغ کے پاس سے گزرا تو باغ میں موجود پانچ چھ فیشن ایبل نوجوانوں کی نگاہ اس پڑ گئی اس شرم و حیاء کے پیکر کو دیکھ کر انھیں دل میں عجب سکون و اطمینان اترتا ہوا محسوس ہوا، گناہوں بھری زندگی پر ندامت محسوس ہونے لگی اور اللہ تعالٰی کے “ اس نوجوان کو اپنے انعامات کے لئے منتخب کر لینے پر “ رشک آنے لگا ان میں سے ایک نے اپنے دوستوں سے کہا “ یار دیکھو! اس کے چہرے پر کتنا نور ہے، داڑھی اس کے چہرے پر کتنی پیاری لگ رہی ہے۔“ دوسرا بولا “ ہاں واقعی بہت نورانی چہرہ ہے، بس یار یہ سب اللہ تعالٰی اور اس کے رسول صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی فرمانبرداری کا انعام ہے، ہماری طرح تھوڑا ہے کہ سارا سارا دن الٹے سیدھے کام کرتے پھرتے ہیں۔ “ اس کے خاموش ہونے پر تیسرا بولا “ یار! اگر تم پسند کرو تو اس سے بارہ وفات ( پنجاب سائیڈ پر بارھویں شریف کے لئے عوام الناس میں اکثر یہی اصطلاح معروف ہے ) کے بارے میں کچھ پوچھیں، کل ہم سوچ ہی رہے تھے کہ کسی دیندار آدمی سے اس کے بارے میں کچھ پوچھیں گے۔ “ سب نے اس کی رائے پر رضا مندی کا اظہار کیا، چنانچہ ایک بولا “ ہاں یہ بالکل ٹھیک ہے ویسے بھی آج چھٹی کا دن ہے، اپنے پاس ٹائم بھی کافی ہے، اس سے معلوم کرتے ہیں اگر یہ کچھ وقت دے دے تو مزہ آ جائے۔“ یہ طے کرنے کے بعد وہ سب اس نوجوان کے قریب پہنچ گئے ان میں سے ایک نے جھجکتے ہوئے کہا “ بھائی صاحب! ہمیں آپ سے کچھ بات کرنی ہے۔“ نوجوان نے آواز سن کر پلٹ کر ان کی جانب اپنی سرمگیں آنکھیں اٹھائیں، ان پر نگاہ پڑتے ہی اس کا دل غم کے گہرے سمندر میں غوطے کھانے لگا، اسے “ امت کے غم میں رحمت عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کے رونے، راتوں کو جاگ جاگ کر اللہ تعالٰی کی بارگاہ میں امت کے گناہگاروں کے لئے مغفرت کا سوال کرنے اور اس کے جواب میں امت کا بےمروتی اور احسان فراموشی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اس معصوم و غمخوار آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی سنتوں نے منہ موڑ کر، ان کے دشمنوں کے طریقے اپنانے نے تڑپا دیا بہرحال اس نے دل کو سنبھالتے ہوئے اور سنت کے مطابق گفتگو کا آغاز کرتے ہوئے، سب سے پہلے انھیں سلام کیا۔ سلام سنتے ہی وہ نوجوان شرمندہ ہو گئے، جھینپتے ہوئے فوراً جواب دیا، نوجوان نگاہیں نیچی کئے ملائمت سے گویا ہوا،

“ پیارے اسلامی بھائیو! الحمدللہ عزوجل، ہم مسلمان ہیں اور اللہ تعالٰی کے سب سے محبوب ترین نبی ( علیہ الصوٰۃ و السلام ) کی امت میں پیدا کئے گئے ہیں، چنانچہ ہمیں اپنی گفتگو کا آغاز بھی اپنے نبی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی سنت اور اسلامی طریقے کے مطابق کرنا چاہئیے۔ حضور پرنور صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کا فرمان عالیشان ہے “ سلام بات چیت کرنے سے پہلے ہے “ (ترمذی) وہ “ اصل میں ہمیں خیال نہ رہا تھا، آئیندہ ضرور خیال رکھیں گے “ ایک نوجوان نے مذید شرمندگی محسوس کرتے ہوئے جلدی سے کہا۔ “ چلیں آئندہ ضرور خیال رکھئے گا، انشاءاللہ عزوجل برکت ہوگی حکم فرمائیے میں آپ کی کیا خدمت کر سکتا ہوں ؟“ نوجوان نے عذر قبول کرتے ہوئے حسب سابق شفقت سے کہا۔ ان میں سے ایک، سب کی طرف سے نمائندگی کرتے ہوئے بولا، “ وہ کل ہم سب بارہ وفات کے بارے میں آپس میں بحث کر رہے تھے اور اس کے متعلق بےشمار سوالات ہمارے ذہنوں میں موجود ہیں ہم چاہ رہے تھے کہ آپ ہمیں کچھ وقت دے کر اس کے بارے میں تفصیل سے بتائیں اور ہمارے سوالوں کے جواب دے کر ہمیں مطمئن کر دیں تو بہت مہربانی ہوگی، ویسے بھی آج چھٹی کا دن ہے، آپ کے پاس بھی کچھ نہ کچھ وقت ضرور ہو گا۔ “ ان کی درخواست سن کر، نوجوان کو دینی ماحول سے وابستہ رہتے ہوئے طویل عرصے تک سنتوں کی خدمت کرنے کے باعث، یہ نتیجہ اخذ کرنے میں دیر نہ لگی کہ ان نوجوانوں کا تعلق مسلمانوں کے اس گروہ سے ہے کہ جو گھروں میں دینی ماحول نہ ہونے کی بناء پر علوم دینیہ سے محروم رہتے ہیں اور پھر اس پیاس کو بجھانے کیلئے بعض اوقات ان لوگوں کے ہاتھ چڑھ جاتے ہیں کہ جن کا کام ہی یہ ہے کہ بھرپور کوشش کرکے کسی بھی طرح مسلمانوں کے دل سے عظمت مصطفٰی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم نکال کر انھیں ذات نبوی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم اور دیگر بزرگان دین پر تنقید کا عادی بنا دیا جائے بلکہ ان کی سوچ کو اتنا ناپاک کر دیا جائے کہ وہ جب بھی اپنے نبی اکرم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی ذات اقدس پر غور کریں تو صرف اور صرف کوئی عیب یا کمی ڈھونڈنے کیلئے۔“ یہ خیال آتے ہی اس نے تہیہ کر لیا کہ انشاءاللہ عزوجل جتنا بھی ممکن ہو سکا وسوسوں کی کاٹ کرکے ان کے دلوں میں اپنے پیارے پیارے مدنی آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی عظمت اور بارھویں شریف کی محبت ہمیشہ ہمیشہ کیلئے راسخ کرنے کی کوشش کروں گا۔“ چنانچہ اس نے جواب دیتے ہوئے کہا،

“ پیارے اسلامی بھائیو! ویسے تو میری مصروفیات بہت زیادہ ہیں اور علمی دولت کی کثرت کا دعوٰی بھی نہیں کرتا، لیکن آپ کے جذبے کے پیش نظر کچھ نہ کچھ وقت ضرور نکالوں گا اور جتنا بھی ممکن ہو سکا آپ کے سوالات کے جوابات دینے کی کوشش کروں گا، بہتر ہے کہ کہیں بیٹھ جائیں تاکہ اطمینان سے گفتگو ہو سکے “ وہ نوجوان مرضی کے عین مطابق نتیجہ نکلنے پر بہت خوش ہوئے بولے “ اندر باغ میں بیٹھتے ہیں ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا میں گفتگو کرنے کا بہت لطف آئے گا “ مشورے پر عمل پیرا ہوتے ہوئے سب ایک درخت کے نیچے پہنچے اور پھر تمام نوجوان، باعمل نوجوان سے کچھ فاصلہ پر حلقے کی شکل میں بیٹھ گئے “ میرے خیال میں گفتگو شروع کرنے سے پہلے آپس میں تعارف نہ کروا لیا جائے ؟“ ان میں سے ایک نوجوان بولا “ ہاں کیوں نہیں، سب سے پہلے میں ہی اپنا تعارف کرواتا ہوں، میرا نام احمدرضا ہے اور حال ہی میں، میں نے کیمیکل انجینئرنگ میں ڈپلومہ کیا ہے۔“ باعمل نوجوان نے مسکراتے ہوئے جواب دیا۔ نوجوان یہ سن کر بہت حیران ہوئے، ان میں سے ایک گویا ہوا “ کیا آپ نے بھی دنیاوی تعلیم حاصل کی ہے ؟“

احمد رضا: جی ہاں، لیکن آپ یہ سن کر اتنے حیران کیوں ہو گئے ؟

نوجوان: اس لئے کہ ہمارا تو خیال تھا کہ جتنے بھی داڑھی عمامے والے ہوتے ہیں، سب کے سب دنیا سے بالکل الگ تھلگ رہتے ہیں، دنیاوی تعلیم سے نہ صرف نفرت رکھتے ہیں بلکہ دوسروں کو بھی اس کے حاصل کرنے سے روکنے کی کوشش کرتے ہیں، صرف اور صرف دینی کتابیں ہی پڑھتے ہیں۔

احمدرضا: نہیں یہ بالکل غلط خیال ہے اور دین داروں سے بدظن اور دور رکھنے کیلئے شیطان کی طرف سے مشہور کی ہوئی بات ہے کیونکہ نہ تو دین اسلام ہمیں اس سے منع فرماتا ہے اور نہ کوئی مدنی ماحول اس کا مخالف ہے ہاں اتنا ضرور ہے کہ یہ علوم، شریعت کے دائرے میں رہ کر سیکھے جائیں اور نیت کو اچھا رکھا جائے اور ان کی وجہ سے دین اسلام کی پاکیزہ تعلیم کو حقیر و معمولی سمجھ کر نظر انداز نہیں کرنا چاہئیے۔ چنانچہ ہم بھی دنیاوی علوم پڑھتے ہیں، لیکن ساتھ ساتھ دین اسلام سے متعلق ضروری معلومات حاصل کرنے کا سلسلہ بھی جاری رہتا ہے۔

نوجوان: واہ، یہ تو بہت اچھی بات ہے، اچھا ہوا کہ آج آپ سے ملاقات کی برکت سے یہ مسئلہ بھی حل ہو گیا اچھا اب میں اپنا اور باقی دوستوں کا تعارف بھی کرادوں، میرا نام جاوید ہے، سب سے پہلے ٹونی ہے، پھر جانی ہے، پھر پرویز ہے، یہ شان ہے اور آخر میں ساگر ہے یہ نام سن کر احمدرضا کے چہرے پر افسردگی کے آثار نمایاں ہو گئے۔

جاوید: خیریت تو ہے آپ کچھ افسردہ دکھائی دینے لگے کیا ہماری کوئی بات ناگوار لگی ہے ؟

احمدرضا: غمگین ہونے کی وجہ انشاءاللہ عزوجل بعد میں عرض کروں گا، آپ ارشاد فرمائیے کیا پوچھنا چاہتے ہیں؟

جاوید: میں ان سب کی طرف سے سوالات کرتا جاؤں گا آپ جوابات عنایت فرماتے جائیے۔

سوال: بارہ وفات کیا ہے ؟ اور اسے یہ نام کیوں دیا گیا ہے ؟

احمدرضا: دراصل اسے بارہ وفات کہنا ہی نہیں چاہئیے بلکہ اسے عید میلادالنبی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم“، “بارھویں شریف“، “عیدوں کی عید“ یا “عاشقوں کی عید“ کہنا چاہئیے کیونکہ ربیع الاول کی بارہ تاریخ کو محبوب کبریا سیدالانبیاء صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم دنیا میں جلوہ افروز ہوئے تھے اس لئے اسے بارھویں شریف کہتے ہیں، اور چونکہ لغوی اعتبار سے عید وہ دن ہوتا ہے کہ جس میں کسی صاحب فضل یا کسی بڑے واقعے کی یادگار منائی جاتی ہو (مصباح اللغات) اور یقیناً ہمارے پیارے آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی شخصیت سے زیادہ صاحب فضل شخصیت اور آپ کی ولادت مبارکہ سے زیادہ اہم واقعہ اور کو
Fri Mar 13, 2009 7:44 am View user's profile Send private message
aamirmemon
Pak Newbie


Joined: 12 Mar 2009
Posts: 3

Reply with quote
here it is
بسم اللہ الرحمٰن الرحیم ط
درودشریف کی فضیلت
جس نے مجھ پر دس مرتبہ درودپاک پڑھا اللہ تعالٰی اس پر سو رحمتیں نازل فرماتا ہے۔ (الترغیب والترھیب ج2 ص322)
صلوا علی الحبیب! صلی اللہ تعالٰی علٰی محمد صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم
ماہ ربیع النور شریف تو کیا آتا ہے ہر طرف موسم بہار آ جاتی ہے۔ میٹھے میٹھے مکی مدنی مصطفٰے صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کے دیوانوں میں خوشی کی لہر دوڑ جاتی ہے۔ بوڑھا ہو یا جوان ہر حقیقی مسلمان گویا دل کی زبان سے بول اٹھتا ہے۔
نثار تیری چہل پہل پر ہزار عیدیں ربیع الاول
سوائے ابلیس کے جہاں میں سبھی تو خوشیاں منا رہے ہیں

ولادت مبارکہ اور بچپن شریف کے واقعات:-
چنانچہ ابو امامہ رضی اللہ تعالٰی عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا: “میری والدہ نے (بوقت ولادت) یوں ملاحظہ فرمایا گویا کہ مجھ سے ایک عظیم نور نمودار ہوا ہے، جس کی نورانیت سے شام کے محلات روشن ہو گئے، (الوفاء) اور حضرت انس رضی اللہ تعالٰی عنہ سے مروی ہے کہ فرمایا “اللہ عزوجل کے ہاں میری عزت و حرمت یہ ہے کہ میں ناف بریدہ پیدا ہوا اور کسی نے میری شرمگاہ کو نہ دیکھا۔ (الوفاء) اور حضرت عبدالرحمٰن بن عوف رضی اللہ تعالٰی عنہ “اپنی والدہ بی بی شفاء رضی اللہ تعالٰی عنہا“ سے روایت کرتے ہیں کہ انھوں نے بتایا کہ “جس وقت حضرت آمنہ رضی اللہ تعالٰی عنہا سے فرزند پیدا ہوا تو وہ ختنہ شدہ تھا، پھر اسے چھینک آئی تو اس پر میں نے کسی کہنے والے کی آواز سنی یرحمک اللہ (یعنی اللہ تعالٰی تجھ پر رحم کرے) پھر مشرق و مغرب کے درمیان ہر چیز روشن ہو گئی اور میں نے اس وقت شام کے محلات دیکھے میں ڈری اور مجھ پر لرزہ طاری ہو گیا اس کے بعد ایک نور داہنی جانب سے ظاہر ہوا کسی کہنے والے نے کہا “اسے کہاں لے گیا ؟“ دوسرے نے جواب دیا “مغرب کی جانب تمام مقامات متبرکہ میں لے گی“ پھر بائیں جانب سے ایک نور پیدا ہوا، اس پر بھی کسی کہنے والے نے کہا “اسے کہاں لے گیا؟“ دوسرے نے جواب دیا “مشرق کی جانب تمام مقامات متبرکہ میں لے گی اور حضرت ابراہیم علیہ السلام کے سامنے پیش کیا انھوں نے اسے اپنے سینے سے لگایا اور طہارت و برکت کی دعاء مانگی“ یہ بات میرے دل میں ہمیشہ جاگزیں رہی یہاں تک کہ رحمت دو عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم مبعوث ہوئے اور میں ایمان لے آئی اور اولین و سابقین میں سے ہوئی۔“ (مدارج نبوت)
ہمارے پیارے آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی والدہء محترمہ حضرت آمنہ رضی اللہ تعالٰی عنہا ارشاد فرماتی ہیں کہ “جس رات میں نے اپنے لخت جگر اور نور نظر کو جنم دیا، ایک عظیم نور دیکھا، جس کی بدولت شام کے محلات روشن ہو گئے حتٰی کہ میں نے ان کو دیکھ لی“ (الوفاء) اور ارشاد فرمایا “جب میں نے ان کو جنم دیا تو یہ زمین پر گھٹنوں کے بل بیٹھ گئے اور آسمان کی طرف دیکھنے لگے پھر ایک مٹھی مٹی لی اور سجدے کی طرف مائل ہو گئے، وقت ولادت آپ ناف بریدہ تھے میں نے پردہ کیلئے آپ پر ایک مضبوط کپڑا ڈال دیا، مگر کیا دیکھتی ہوں کہ وہ پھٹ چکا ہے اور آپ اپنا انگوٹھا چوس رہے ہیں جس سے دودھ کا فوارہ پھوٹ رہا ہے۔“ (الوفاء)
نعتیہ محافل قائم کرنا:-
نعتیہ محافل کا قیام بھی سنت مبارکہ ہے اور اس کا قائم کرنا خود مدنی آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم سے ثابت ہے چنانچہ “بخاری شریف“ میں سیدہ عائشہ رضی اللہ تعالٰی عنہا سے مروی ہے کہ مدنی مصطفٰی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم، حضرت حسان رضی اللہ تعالٰی عنہ کیلئے مسجد میں منبر رکھتے، جس پر وہ کھڑے ہو کر (اشعار کی صورت میں) رسول صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی طرف سے فخر کرنے میں (قریش پر) غالب ہوتے یا (قریش کی طرف سے معاذاللہ کی گئی ہجو کے جواب میں شان رسالت کا) دفاع کرتے اور رحمت عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم فرماتے “اللہ تعالٰی حضرت جبرئیل کے ذریعے حسان کی مدد فرماتا ہے جب تک کہ یہ اللہ عزوجل کے رسول کی طرف سے فخر کرنے میں غالب ہوتے ہیں یا دفاع کرتے ہیں۔“
شربت دودھ پلا کر یا کھانا کھلا کر ایصال ثواب کرنا:-
اس کی اصل بھی صحیح احادیث سے سے ثابت ہے چنانچہ ابوداؤد اور نسائی شریف میں ہے کہ، “حضرت سعد بن عبادہ رضی اللہ تعالٰی عنہ نے رسول اللہ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں عرض کی “یارسول اللہ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم! میری والدہ فوت ہو گئی ہیں (تو ان کے ایصال ثواب کے لئے) کونسا صدقہ افضل ہے ؟ رحمت عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا “پانی“ چنانچہ حضرت سعد رضی اللہ تعالٰی عنہ نے ایک کنواں کھدوایا اور فرمایا “ھذہ لام سعدیہ یہ سعد کی ماں کیلئے ہے۔“
پیارے اسلامی بھائیو! اس حدیث پاک سے معلوم ہوا کہ کسی کے لئے ایصال ثواب اور اس کا کوئی نام رکھنا دونوں فعل جائز ہیں، چنانچہ بارھویں شریف میں کھانے یا شربت وغیرہ کا ثواب اپنے پیارے آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی بارگاہ میں پیش کرنے کی سعادت حاصل کرنا اور اس کا نام “بارھویں شریف کی نیاز“ وغیرہ رکھ دینا بالکل جائز ہے۔“
ضمناً عرض ہے کہ ہمارا بارگاہ رسالت صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم میں ایصال ثواب کرنا معاذاللہ عزوجل اس لئے ہرگز نہیں کہ جناب احمد مختار صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کو اس کی محتاجی و ضرورت ہے، بلکہ اسے تو آپ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی نگاہ رحمت کے مستحق ہو جانے کیلئے ایک ذریعہ بنایا جاتا ہے، اس کو بالکل یوں ہی سمجھئے کہ جیسے کسی بادشاہ کی خدمت میں اس کی رعایا میں سے کوئی بہت ہی غریب آدمی، ایک حقیر سا تحفہ پیش کرے۔ اب یقیناً بادشاہ کو اس کے تحفے کی کوئی حاجت نہیں لیکن یہ بات یقینی ہے کہ بادشاہ اس کے جواب میں اپنی شان کے مطابق تحفہ ضرور عطا کرے گا۔
جھنڈوں وغیرہ سے اپنے گھر و گلی و محلہ و مسجد کو سجان:-
آمد مصطفٰی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم پر جھنڈے نصب کرنا اللہ عزوجل کی سنت کریمہ ہے، چنانچہ بی بی آمنہ رضی اللہ تعالٰی عنہا ولدت پاک کے واقعات بیان کرتے ہوئے ارشاد فرماتی ہیں، “پھر میں نے دیکھا کہ پرندوں کی ایک ڈار میرے سامنے آئی، یہاں تک کہ میرا کمرا ان سے بھر گیا ان کی چونچیں زمرد کی اور ان کے بازو یاقوت کے تھے، پھر اللہ تعالٰی نے میری نگاہوں سے پردہ اٹھایا حتٰی کہ میں نے مشارق و مغارب کو دیکھ لیا اور میں نے دیکھا کہ “تین جھنڈے“ ہیں جن میں سے ایک مشرق میں، ایک مغرب میں اور ایک خانہء کعبہ کے اوپر نصب ہے۔“ (مدارج النبوت)
آپس میں مبارک باد و خوشخبری دینا:-
سرکار صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی دنیا میں جلوہ گری کے وقت آپس میں مبارک باد دینا اور خوشخبریاں سنانا اور بشارتیں دینا فرشتوں کی سنت مبارکہ ہے۔ چنانچہ حضرت عمرو بن قتیبہ رضی اللہ تعالٰی عنہ کی روایت کے ان الفاظ پر غور فرمائیے “جب حضرت آمنہ رضی اللہ تعالٰی عنہا کے یہاں پیدائش کا وقت آیا تو اللہ تعالٰی نے حکم فرمایا کہ تمام فرشتے میرے سامنے حاضر ہو جائیں چنانچہ فرشتے ایک دوسرے کو “بشارتیں دیتے ہوئے حاضر ہونے لگے“ اور اسی روایت میں آگے ہے کہ “جب ولادت مبارکہ ہوئی تو تمام دنیا نور سے بھر گئی اور فرشتوں نے ایک دوسرے کو مبارک باد دی“ اورمدارج النبوت کی روایت میں بیان ہوا کہ “اور کوئی جانور ایسا نہ تھا جس کو قوت گویائی نہ دی گئی ہو اور اس نے بشارت نہ دی ہو، مشرق کے پرندوں نے مغرب کے پرندوں کو خوشخبریاں دی۔“
بوقت ولادت قیام:-
کھڑے ہو کر استقبال محبوب باری تعالٰی کرنا، اللہ تعالٰی کے حکم سے فرشتوں کی سنت مبارکہ ہے چنانچہ مفتی احمد یار خاں نعیمی رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ، “جاءالحق“ میں تحریر فرماتے ہیں “مواہب لدنیہ اور مدارج النبوت وغیرہ میں ذکر ولادت میں ہے کہ شب ولادت ملائکہ نے آمنہ خاتون رضی اللہ تعالٰی عنہا کے دروازے پر کھڑے ہو کر صلوٰۃ و سلام عرض کیا، ہاں ازلی راندہ ہوا (یعنی ہمیشہ دھتکارا ہوا) شیطان، رنج و غم میں بھاگا بھاگا پھرا، اس سے معلوم ہوا کہ میلاد سنت ملائکہ بھی ہے اور یہ بھی معلوم ہوا کہ بوقت پیدائش کھڑا ہونا ملائکہ کا کام ہے اور بھاگا بھاگا پھرنا، شیطان کا فعل۔ اب لوگوں کو اختیار ہے چاہیں تو میلاد پاک کے ذکر کے وقت ملائکہ کے فعل پر عمل کریں یا شیطان کے۔“
روزہ رکھنا :-

بروز ولادت روزہ رکھنا محبوب کبریا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کی سنت مبارکہ ہے چنانچہ مسلم شریف میں حضرت ابو قتادہ رضی اللہ تعالٰی عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم سے پیر کے دن کے روزے کا سبب دریافت کیا گیا (یعنی پوچھا گیا کہ آپ خاص طور پیر کے دن، روزہ رکھنے کا اہتمام کیوں فرماتے ہیں) تو آپ نے ارشاد فرمایا اسی میں میری ولادت ہوئی اور اسی میں مجھ پر وحی نازل ہوئی۔
عیدی تقسیم کرنا:-
یوم ولادت عیدی تقسیم کرنا ہمارے اللہ عزوجل کی سنت کریمہ ہے پہلے عیدی کا مطلب جان لیجئے کہ لغوی اعتبار سے “عید کے انعام“ کو عیدی کہتے ہیںچنانچہ حضرت عمرو بن قتیبہ رضی اللہ تعالٰی عنہ سے مروی ہے
دن اس
(1) دنیا کے پہاڑ بلند ہو گئے (2) سورج کو اس دن عظیم روشنی عطا کی گئی (3) دنیا کی تمام عورتوں کیلئے نرینہ اولاد مقرر فرمائی (4) حکم فرمایا کہ کوئی درخت بغیر پھل کے نہ رہے (5) جہاں بدامنی ہے وہاں امن ہو جائے (6) تمام دنیا نور سے بھر گئی (7) آسمان روشن ہو گئے ( 8 ) حوض کوثر کے کنارے مشک و عنبر کے ستر ہزار درخت پیدا فرمائے اور ان کے پھلوں کو اہل جنت کی خوشبو قرار دیا۔“
جلوس نکالنا :-
جلوس نکالنے کے بارے میں اصل، مدارج النبوت میں درج شدہ یہ روایت ہے کہ جس میں بیان کیا گیا ہے کہ جب مدنی آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم ہجرت فرما مدینہ منورہ کے گردونواح میں پہنچے تو بریدہ اسلمی (رضی اللہ تعالٰی عنہ) اپنے قبیلے کے ستر لوگوں کے ساتھ، انعام کے لالچ میں رحمت عالم صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کو گرفتار کرنے کیلئے حاضر ہوئے، لیکن کچھ گفتگو کے بعد آپ نے مدنی آقا صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم سے دریافت کیا “آپ کون ہیں ؟“ فرمایا “ میں محمد بن عبداللہ، اللہ کا رسول ہوں “ آپ نے جیسے ہی نام اقدس سنا تو دل کی کیفیات بدل گئیں اور اسلام قبول فرما لیا، آپ کے ساتھ، تمام ساتھیوں نے بھی اس سعادت کو حاصل کیا پھر آپ نے عرض کیا “یارسول اللہ صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم“ مدینہ میں داخل ہوتے ہی وقت آپ کے ساتھ ایک جھنڈا ہونا چاہئیے۔“ اس کے بعد آپ نے اپنے سر سے عمامہ اتارا اور اسے نیزے پر باندھ لیا اور (بحیثیت خادم) سیدالانبیاء صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم کے آگے آگے چلنے لگے۔“
یارب مصطفٰی عزوجل و صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم! ہمیں خوش دلی اور اچھی اچھی نیتوں کے ساتھ جشن ولادت منانے کی توفیق مرحمت فرما اور جشن ولادت کے صدقے ہمیں جنت الفردوس میں بےحساب داخلہ عنایت کر۔
بخش دے ہم کو الٰہی! بہر میلادالنبی صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم
نامہء اعمال عصیاں سے مرا بھر پور ہے
اٰمین بجاہ النبی الامین صلی اللہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلم
والسلام مع الاکرام
Fri Mar 13, 2009 8:01 am View user's profile Send private message
CoolMind
Senior Member Pakistani
Senior Member Pakistani


Joined: 14 Jun 2008
Posts: 885

Reply with quote
sarfarazlovesu wrote:
ALHAMDULILLAH theek thaak

aj kal berozgar dot com huey huey hain so searching for job and also preparing for remaining papers of CA

ap sunao woh walay forum ki to aisee ki taisee ho gayee hai


yeh hum naheen

waqi hum kanjar thora hi hain Wink hehhe


oh inshallah mil jaegi job i'll pray

haan yaraa ""ye ham nahi"" wala bhi toba kareega...
sahi ki bajae thi salay ab tak ro rahe hain becharay

_________________
Fri Mar 27, 2009 3:54 pm View user's profile Send private message
ak_akhan
Full PK Member
Full PK Member


Joined: 30 Aug 2008
Posts: 295
Location: UK

Reply with quote
Please see the answer from askimam.org ---Many people repeatedly ask what is the Sharée status of "Éid-e-Meelad-un-Nabee'.

Moreover, What is the ruling of the Shariáh with regard to standing up in reverence and reciting Salaat and salaam during the customary Meelad proceedings?

Answer:

The establishment of ceremonial gatherings under the banner of "Éid-un-Nabee" is prohibited according to the Shariáh. Attaching importance and significance to such functions is purely Bidáh and an innovation in Deen, because neither did Rasulullah himself indulge in it, nor did the illustrious Khulafaa-e-Raashideen (Radhiyallaahu-Ánhum) organise such functions. Similarly, neither did any of the other Sahaaba-e-Kiraam (Radhiyallaahu-Ánhum) participate in such gatherings, nor is there any incident on record during the blessed era of the taabi'een or tab'e taabi'een (Rahmatullaahi Álayhim) that can, in any way, substantiate this innovation. No proof whatsoever can be found, in spite of the fact that these were people who were best acquainted with the Sunnah of Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) and had total love for him. They were staunch followers of the Shariáh.

Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) has in no unclear terms, said: - "whoever introduces anything that is not part of Deen, into this Deen of ours, it shall be rejected." (Bukhari/Muslim)

In another Hadith he says: - "Hold steadfast onto my Sunnah and the Sunnah of the rightly-guided Khulafaa, after me. Hold steadfast onto it firmly, and beware of newly-introduced practices, for every new practice is an innovation and every innovation leads one astray." (Abu Dawood/Tirmizi)

Severe warnings have been sounded in the above-mentioned Ahaadith with regard to introducing and implementing innovations in Deen. The holy Qur'an enjoins: - "And whatsoever the messenger giveth you, take it. And whatsoever he forbiddeth, abstain (from it). And keep your duty to Allah. Lo! Allah is stern in reprisal." (59:7)

"Verily in the messenger of Allah, ye have a good example for him who looketh unto Allah and the last day, and remembereth Allah much." (33:21)

"This day have I perfected your religion for you and completed my favour unto you, and have chosen for you a religion, al-Islam." (5:3)

There are numerous other Aayaat and Ahaadith that can be quoted. But from no Aayat or Ahaadith can the current form of "Eid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)', be proved. In spite of this, the people that revel in establishing and participating in such functions, and regard the same as a form of reward, insist on forging ahead with their carnal ideals.

This attitude of theirs causes some serious questions to be posed: -

Did Allah Ta'ala not perfect Deen-e-Islam for this Ummah?
Did Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) not disclose to us all the facets and aspects of Islam that required being put into practice?

The bitter truth for the exponents of Bid'a is that it was only many centuries after the righteous and golden era of Islam that people began t0 fabricate innovations under the h00d of "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" and "Mahfeel-e-Meelad", which were, practices not ordained by Allah Taăla to any of His Ambiyaa Álayhimus salaam. Will such innovations grant proximity to Allah Taăla? Never! On the contrary, these innovations should be a cause of great concern and alarm for the Ummat-e-Muslimah! Na-oothu-billahi-min-thalika!

We seek Allah Taăla's refuge from innovations that tantamount to levelling mind-boggling accusations against the pure and venerable personality of Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) by innovating such practices, one is indirectly suggesting that Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) concealed from the Ummah, aspects of Deen that were of immense benefit t0 it. How can this be possible when Allah Ta'ala himself categorically declares that he perfected this religion for us and completed his favour upon us, which means that Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) conveyed every single aspect of Deen to the Ummah and that he left no stone unturned in showing us every road leads t0 Jannah and every road that takes one to Jahannam so that we may adopt the former and avoid the latter. Hence, it is mentioned in one Hadith: - "It was the incumbent duty of every Nabee Álayhis-salaam to guide his Ummah towards that which was beneficial for it and warn it against that which was detrimental for it." (Muslim) It is a known fact that Rasulullah is the most superior of all the Ambiyaa Álaihimus-salaam and also that he is the seal of all the prophets Álayhimus-salaam. He left no stone unturned in conveying Deen to us and rendering precious advice to us. If the "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" was a divinely inspired act, then surely Rasulullah would have commanded the Muslimeen to it, or at least, either he or his beloved Sahaaba (Radhiyallahu-Ánhum) would have practised it. When it cannot be substantiated by any of their actions, then it is a crystal clear fact "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" or "Mahfeel-e-Meelad" (call it what you may), has absolutely no relationship with Islam instead, it is Bidáh (innovation) against which we have been soundly warned by Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) as was noted from the tw0 Ahaadith mentioned at the beginning of this discussion and, apart from them, many more can be quoted to prove the fallacy of innovation in Islam. That is why, in the light of these unambiguous proofs, the Úlama-e-Haqq have always refuted and rejected the customary form of "Éid-e-Meelad-un-Nabee·(Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" and Mahfeel-e-Meelad and have also always discouraged people from participating in such gatherings.

If a careful and proper dissection of this "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" is made, it will be found that, apart from it being a manifestation of Bid'at, it also encompasses 0ther evils such as the intermingling of sexes, usage of musical instruments and many other such evils which wildly flaunted under the banner of "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" and under the deception that reward is being accrued. The most abhorring and shocking evils in these functions are the acts of shirk that take place. With hollow claims of "Hubbe-Rasul (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" (love for Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)), entreaties and supplications are made to beings other than Allah, namely to Ambiyaa Álaihimus-salaam and Auliaa-e-Kiraam Rahmatullaahi-Álaaihum. The exponents of "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" also blindly acknowledge and believe that Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) comes to this function and due to this belief, they stand up in respect and veneration to welcome him. This belief is a blatant fabrication and a sign of compound ignorance. The true and down t0 earth fact is that Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) does not arrive at any "Éid-e-Meelad-un Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" function and that he is in his Rawdha-e-Mubarak (grave) at Madinah Munawwarah and will emerge from it at the onset of Yawmul-Qiyaamah. The following Aayaat and Hadith testify to this fact: - The Qur'an, addressing Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam), announces explicitly: -

"Lo! Thou wilt die, and Lo! They will die. Then Lo! On the day of resurrecti0n, before your sustainer, you will dispute." (39:30,31)

At another juncture, Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) is addressed together with the rest of mankind: -

"Then Lo! After that ye surely die, then Lo! On the day of resurrection ye are raised (again)" (23:16)

Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) himself has said in a Hadith: - "My grave will be the first to be opened on the day of Qiyaamah and I shall be the first person to intercede and the first person whose intercession shall be accepted."

The above mentioned Aayaat and Hadith as well as other similar Aayaat and Ahaadith prove that all of mankind will be raised from their graves on the day of Qiyaamah, with Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) being no excepti0n. This is a belief that revolves around the consensus of opinion of the entire Ummat-e-Muslimah, hence the need for all Muslims to believe that Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) is in his Rawdha-e-Mubarak and does not frequent any "Éid-e-Meelad-un-Nabee (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" programme.

All Muslims must be made aware of this so that unsuspecting ones do not fall prey to the Bid'at and innovations introduced into Deen by ignoramuses of this Ummah.

We make Duáa to Allah Ta'ala that he keeps us on the correct Deen-ul-Islam and that he gives guidance to those that goes astray. May Allah Ta'ala's Durood and salaam descend upon Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam). The Importance of Durood and Salaam Instead of squandering our money and time on futile acts 0f Bidáh let us rather utilise our precious time, as much as possible on the recitation of Durood and salaam upon our beloved Rasulullah, which is indeed, a highly meritorious and virtuous act.

The Qur'an enjoins: - "Lo! Allah and his Malaaikah shower blessings on the Nabee 0 ye who believe ask for the descent of blessings on him and salute him with a worthy salutation." (34:56)

Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) has said: - "Whosoever sends one Durood upon me, Allah Ta'ala will shower ten mercies upon him." (Muslim)
Particularly on the day of Jumuáh one should increase the recitation of Durood and salaam.

May Allah Taăla give us the guidance to recite Durood abundantly and grant us 'Hubbe-Rasul (Sallallaaahu Álayhi Wasallam)" in the true sense of the word.
Warning to Úlama

Hadhrat Muádh bin Jabal (Radhiyallaahu Ánhu) narrates the following Hadith, 'Rasulullah (Sallallaaahu Álayhi Wasallam) said, 'whenever a Bidáh originates in my Ummah and the Úlama do not prevent it, the laánat of Allah, of his angels and of mankind descend upon them (the Úlama who refrain from prohibiting the innovation).' (Mishkăt).

Published by: Jamiatul Ulama (Transvaal)
- Azaadville branch
Fri Mar 27, 2009 4:24 pm View user's profile Send private message Visit poster's website
kamran20
Pak Newbie


Joined: 21 Jan 2008
Posts: 5

Reply with quote
hello thats good , please cary on
Mon Mar 30, 2009 10:38 am View user's profile Send private message
reehab
Full PK Member
Full PK Member


Joined: 19 Mar 2008
Posts: 427
Location: KSA

Reply with quote
sarfarz bahyee bahut achi sharing ke he. bus jo log biddet ko farz samjh ker karte hien woh log kahsary me hien.
Sun Apr 12, 2009 6:11 pm View user's profile Send private message
kamranhg
Pak Newbie


Joined: 12 Sep 2007
Posts: 40

Reply with quote
REALLY SHAME ON YOU WHO ARE AGAINST THE EID MILAD OF HOLY PROPHET (PBUH), WHO ARE REHMATULLIALAMEEN FOR WHOLE UNIVERSE..... STOP SPREADING YOUR STUPID THOUGHTS WHO REFLECT ONLY WAHABI SECT


ALLAH TUM LOGON KO GARAT KARAY GA INSHALLAH

Fri Apr 17, 2009 8:28 pm View user's profile Send private message
loje
Forum Family Member
Forum Family Member


Joined: 14 Jan 2008
Posts: 5902
Location: Saudia Arabia

Reply with quote
kamranhg wrote:
REALLY SHAME ON YOU WHO ARE AGAINST THE EID MILAD OF HOLY PROPHET (PBUH), WHO ARE REHMATULLIALAMEEN FOR WHOLE UNIVERSE..... STOP SPREADING YOUR STUPID THOUGHTS WHO REFLECT ONLY WAHABI SECT


ALLAH TUM LOGON KO GARAT KARAY GA INSHALLAH


can i ask u few questions plz?

did the Prophet Celebrate this day ??????

did the companions celebrate it ????

did Fatima Radia Allah Anha ( as i see that maybe u r a shia ) did She Celebrate it ????


_________________
Fri Apr 17, 2009 8:41 pm View user's profile Send private message
sarfarazlovesu
Senior Proud Pakistani
Senior Proud Pakistani


Joined: 28 Feb 2008
Posts: 1158

Reply with quote
Dear Loje

there is a sect in Pakistan and India called brelvi, i aqaid shia and brelvi have many similarities

i think this person is barelvi

their religion is based on dreams and what is said by their peer sb

they dont want to read quran and authentic ahadith....

may ALLAH give them hidaya ameen
Fri Apr 17, 2009 11:16 pm View user's profile Send private message
Display posts from previous:    
Reply to topic    Forum Pakistan - Pakistani Forums Home » Islam Forum All times are GMT + 5 Hours
Goto page 1, 2  Next
Page 1 of 2

 
Gupshup Forum: Urdu ForumIslam ForumPakistan Army ForumAap Ka SheharNaukaryPakistani Visa
Desi Sports and News: Live CricketSports ForumAkhbar OnlinePakistan EventsWorld News Discussion
Entertainment Media: PTV ForumGEO ForumLollywood ForumBollywood OnlineHollywood ForumDesi Radio
Desi Masala Forums: Gupshup Chit ChatComputer GamesMusic ForumDrama ForumsGhazal ForumDesi FashionDesi Food
Official Forums (Government Department): Dak Khana ChatPolice ForumWapda OnlinePTCL ForumUfone ForumRailway ForumSehat Chit ChatTaleem OnlineTax Forum PKZameen ForumAdalat Forum


Pure Pakistani forum to express your views, thoughts with complete freedom. Archives 1 2
Copyright © ForumPakistan.com 2013 All rights reserved.

Contact Us | Advertise | Report Abuse | FP Team | Disclaimer